سابق ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی فیصل کریم خان کنڈی اور ممبر صوبائی اسمبلی خیبرپختونخوااحمد کریم خان کنڈی کے ماموں طارق کنڈی کے گھر میں گیس لیکج کے باعث دھماکہ،

Spread the love

ڈیرہ اسماعیل خان(راجہ جہانزیب کیانی)ڈیرہ چشمہ روڈ کنڈی ماڈل فارم میں پاکستان پیپلز پارٹی کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات اور سابق ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی فیصل کریم خان کنڈی اور ممبر صوبائی اسمبلی خیبرپختونخوااحمد کریم خان کنڈی کے ماموں طارق کنڈی کے گھر میں گیس لیکج کے باعث دھماکہ، فیصل کریم خان کنڈی کے ماموں طارق زمان کنڈی انکی اہلیہ اور کمسن بھتیجی سمیت3افراد جاں بحق،مرحوم طارق زمان کنڈی کا بیٹا، 2بیٹیاں اور نواسی سمیت 4افراد جھلس کر زخمی’ زخمیوں کو تشویشناک حالت کے باعث برن سنٹر اسلام آباد ریفر کر دیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق تھانہ صدر کی حدود ڈیرہ چشمہ روڈ پرگائوں کوکار کے قریب پاکستان پیپلز پارٹی کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات اور سابق ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی فیصل کریم خان کنڈی اور ممبر صوبائی اسمبلی خیبرپختونخوااحمد کریم خان کنڈی کی رہائش گاہ کنڈی ماڈل فارم کے عقب میں ان کے ماموں طارق کنڈی کے گھر گیس لیکج کے باعث زور دار دھماکے کے بعد آگ لگ گئی جس نے دیکھتے ہی دیکھتے گھر کے دو رہائشی کمروں اور کچن کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔ دھماکے کی آوازکی اطلاع پر ڈی ایس پی صدر حافظ عدنان خان کی قیادت میںتھانہ صدر پولیس اور انچارج بم ڈسپوزل سکواڈ عنایت اللہ ٹائیگر اور ریسکیو1122ٹیم کی میڈیکل و فائر سیفٹی ٹیم نے بروقت رسپانس کرتے ہوئے جائے وقوعہ پر پہنچ کر آگ پر قابو پایا اور زخمیوں کو ابتدائی طبی امداد فراہمی کے بعد ہسپتال منتقل کیا، گیس لیکج دھماکے میں فیصل کریم خان کنڈی اور پیپلز پارٹی کے خیبر پختونخوا اسمبلی میں رکن اسمبلی احمد کریم خان کنڈی کے ماموں طارق زمان کنڈی ولدعزیز الرحمن کنڈی، ان کی اہلیہ حمیدہ بی بی،بیٹا حیدر کنڈی، دو بیٹیاں عروبہ بی بی اور زینب بی بی سمیت دو نواسیاں 7سالہ مریم بی بی اور آمنہ بی بی دختران حید ر کنڈی جھلس کر زخمی ہوگئے جبکہ گھریلو سامان اور گھر میں کھڑی گاڑی کو بھی نقصان پہنچا۔ ریسکیو1122کی میڈیکل ٹیم نے زخمیوں کو ابتدائی طبی امداد کے بعد سول ہسپتال ڈیرہ منتقل کیا گیا جہاں طارق زمان کنڈی انکی اہلیہ حمیدہ بی بی اور 7سالہ نواسی مریم بی بی زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے خالق حقیقی سے جا ملیں، دیگر زخمیوں کو تشویشناک حالت اور ڈیرہ ہسپتال میں برن سنٹر کی سہولیات نہ ہونے پر اسلام آباد منتقل کردیا گیا۔ آخری اطلاعات تک دیگر زخمیوں کی حالت نازک بیان کی جاتی ہے۔ ادھر اس افسوسناک سانحہ پر ہر آنکھ اشکبار تھی اور سیاسی و سماجی شخصیات سمیت مقامی عمائدین کی کنڈی ماڈل فارم آمد کا سلسلہ جاری تھا۔